• Post by: Zeeshan Nasar
  • 38

User Rating: 5 / 5

Star ActiveStar ActiveStar ActiveStar ActiveStar Active
 

ڈیجیٹل خطّاطی اور والد صاحب

 

کمپیوٹر سکرین پرمختلف ٹولز کے ذریعے حروف تراشنا ڈیجیٹل خطاطی کہلایا۔ یہ تاریخی چیز نہیں بلکہ اس کی تاریخ اب بن رہی ہے۔ اچھے ڈیزائنر خود ساختہ اسالیب میں الفاظ بناتے رہتے ہیں اورایڈورٹائزنگ کمپنیوں کی تو یہ مستقل ضرورت ہے،کیونکہ جدت طرازی ان کے پیشے کی جان ہے۔ تاہم کلاسیکل اسالیب میں ایسی کوشش کم ہی دیکھنے میں آتی ہےکیونکہ کمپیوٹر میں اوریجنل خطاطی ہی کو ٹریس لیا جاتا ہے یا پھر فانٹس کا استعمال کیا جاتا ہے۔

              لیکن کیا یہ صرف ٹریسنگ واقعی خطاطی کا بدل ہو سکتی ہے؟

              یہ اہم سوال ہے،اور اس کا جواب ہے ’’تقریباً‘‘۔

              ایسی شخصیات جو فن سے گہری وابستگی رکھتی ہیں،ٹریسنگ کے رزلٹ سے مطمئن نہیں ہیں۔اس میں اسکیننگ کی کمزوری اور ٹریسنگ ٹولز کی کمزوری کے مقابل وسیع زومنگ ریج بڑا چیلنج ہےکیونکہ اگر کوئی لفظ صد فی صد درست نقل کر بھی لیا جائے تو اس کاہر ہر پوائنٹ میں درست نظر آنابہرحال محال ہے۔

             فانٹ سازی کے حوالے سےدیکھا جائے تو درست بات تو یہی ہے کہ جو لفظ جس پوائنٹ میں خطّاط نے لکھا،اُسی پوائنٹ میں اسے استعمال بھی کیا جائے،تاہم عملًا ایسا نا ممکن ہے۔اس صورت حال سے اس بات کا جواز پیدا ہو تا ہے کہ جدید ڈیجیٹل میڈیا کے استعمال کے لیے ہمیں بہترین ٹریسنگ رزلٹ کو مزید درمزید بہتر کرنے کی ضرورت ہے،تاکہ ایک خطاطانہ پوائنٹ پر کیا گیا کام کئی ایک پوانٹس تک کا رآمد رہ پائے۔والد گرامی قدر جناب نصرالله مہر صاحب تیس سال تک عملاً خطاطی سے منسلک رہے اور اب گزشتہ بارہ چودہ سال سےفانٹ سازی میں سرگرم ہیں۔ والد صاحب ٹریسنگ کے کسی پروگرام سے کبھی مطمئن نہیں ہوئے بلکہ وہ مینوئلی ٹریسنگ کے بعد نظری تقابل کے قائل ہیں۔تاہم ان کا کہنا ہے کہ ڈیجیٹل خطاطی میں بھی بہت دھوکے ہیں،جب لائن صاف اور شارپ ہوجاتی ہے تو لفظ متنوع اشکلال میں بھی صحیح نظر آنے لگتے ہیں،حالانکہ صحیح تو کوئی ایک ہی ہوتا ہے۔ چنانچہ خطاطی میں وہ نظری مشق کو بہت اہمیت دیتے ہیں۔

          چند ماہ پہلے جب وہ حضرت نفیس شاہ صاحب ؒ کے قلم خفی کے شاہکار دیوانِ غالب پر کام کر رہے تھے تو مجھے اشکال اور خط کے مجموعی تأثر پر با ر بار اعتراض ہوتا رہا،لیکن والد صاحب بضد تھے کہ شاہ جی کا انداز یہی ہے۔چنانچہ جب فانٹ کا بنیادی سٹرکچر تیار ہو گیا تو بھی میری اجنبیت تا دیر قائم رہی،تاہم جب کچھ اشعار ٹائپ کر کے حضرت شاہ جی کی خطاطی سے تقابل کیا گیا تو میرے وسوسے دُور ہوئے۔والد صاحب کہتے ہیں کہ جب اس فانٹ میں ۲۴ پوائنٹ سے آگے لکھا جائے گا تو خطاطانہ تأثر ختم ہوتا جائے گا۔الحمد للہ والد صاحب کے اس کا م کو خطاطوں نے بھی بہت سراہا اور خصوصًا شاہ جی کے تلمیذِ خاص جناب جمیل حسن صاحب نے والد صاحب کو فون کر کے مبارک باد دی اوراپنے مسرت کا اظہار کیا۔

        والد صاحب کوکَروْز کے پیچ و خم پرپورا عبور حاصل ہے۔ان کےڈیجیٹل خطوط کے آئنے میں کلاسیکل چہرے اپنی اصلی آب و تاب سے نظر آتے ہیں۔اہم بات یہ ہے کہ وہ دستیاب قلم اور ریزولیشن میں خاص تناسب قائم کر کے کام کرتے ہیں۔نیز سنگل لائن ٹول کے علاوہ وہ ڈبل لائن ٹول( کورل ڈرا میں کیلی گرافک ٹول) سے بھی الفاظ تراش لیتے ہیں،حالانکہ اس میں قلم کی گردش نہیں پائی جاتی۔

         آج کل والد صاحب سلطان الخطاطین جناب حافظ محمد یوسف سدیدی ؒ کے خطوط میں محو ہیں ،چنانچہ ان کے تازہ نمونوں میں حضرت سدیدی صاحب کا رنگ نمایاں ہے۔ امید کی جانی چاہیے کہ ان کی یہ مشغولیت اور شوق برقرار رہے تو مشتاقانِ خط کو کئی بڑے اساتذہ کرام کے اسالیب فن کے عکس نظر نواز ہوں گے۔

محمد ذیشان نصر 

 

Advanced Typography & Fonts Development. A Type foundry for custom multilingual, Traditional and Modern type designs, fonts and calligraphy. Expert in Arabic, Persian, Urdu, RTL supported Arabic scripts.

Contact Us

  •   Address: Lahore,Pakistan
  •   Email: This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.
  •   Phone 1: +92-305-6038860   Phone 2: +92-303-4830826
Top
We use cookies to improve our website. By continuing to use this website, you are giving consent to cookies being used. More details…